175

اے اڑتی ہوئی خاک_ چمن ، عید مبارک اے سہمی ہوئی ارض_ وطن ، عید مبارک

اے اڑتی ہوئی خاک_ چمن ، عید مبارک
اے سہمی ہوئی ارض_ وطن ، عید مبارک

مقتول اجالوں کا لہو دیکھنے والو
لو چاند سے کہتا ہے گہن ، عید مبارک

خیرات کے کاسے میں گلے مل گئے تینوں
پیروں کی جلن ، دل کی جلن ، عید مبارک

ہر روز نیا ظلم ، نیا خون زمیں پر
اب ہوتی نہیں چرخ_ کہن ! عید، مبارک

سڑکوں پہ لگی آگ میں جلتے ہوئے انساں
میں سوختہ دل، سوختہ تن، عید مبارک؟

زندان_ اساطیر میں ڈالے گئے لوگو
کہتی ہے خیالوں کی گھٹن عید مبارک

دیکھا ہے بہت دور تلک آگ کا منظر
کس دل سے کہوں ، اہل_ وطن عید مبارک

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں