143

اِبلیس کی عرضداشت

کہتا تھا عزازیل خداوندِ جہاں سے
پرکالۂ آتش ہُوئی آدم کی کفِ خاک!
جاں لاغر و تن فربہ و ملبُوس بدن زیب
دل نزع کی حالت میں، خِرد پُختہ و چالاک!
ناپاک جسے کہتی تھی مشرق کی شریعت
مغرب کے فقیہوں کا یہ فتویٰ ہے کہ ہے پاک!
تجھ کو نہیں معلوم کہ حُورانِ بہشتی
ویرانیِ جنت کے تصوّر سے ہیں غم ناک؟
جمہور کے اِبلیس ہیں اربابِ سیاست
باقی نہیں اب میری ضرورت تہِ افلاک!

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں