261

غزلِ بہار


عجب   سماں   سا   بنا  دل   نے   لی   انگڑائی    ہے 

چل  مر غزار   چلیں  کہ  اب   پِھر  سے بہارآئی   ہے 

کِسی   پُر  لطف     مُسافت   کے    سفر    پہ  نِکلیں 

وہ    ہمسفر    رہے    دونوں    کی    ہی   بھلائی  ہے 
اُسے  قدرت   کے   نِظاروں   میں   ساتھ   رکھنے  کا 

یہ    وطیرہ   بھی   اب    چاہت   کا  شنا  سائی  ہے 
اُسے   بہار   سے   پیار, ہیں  ہم  خزاں   کے طلب گار 

دونوں   نکتوں   میں   کِسی   ایک  میں  گہرائی  ہے 
ہر   اِک   چٹان   کا   ہی   شاہیں   سے   پڑا   ہے  پالا 

ہر    طرف   شمع    پہ     پروانہ   ہی    شیدائی   ہے 
ہر     مر    غزار    میں    ترانوں    کا   ترنم    سنئیے 

ہر  سِمت    شاخ    پہ    بلبل    کی   ہی  سگھائی ہے 
تیرے    انداز   کی   سی   مخُمور    مست    ہے   وہ 

جو    چراگاہ   میں   چرتی    ہرن   اب    بھائی   ہے
صبح    بخیر    کی     اُسکی     پُکار     ایسی   تھی 

جیسے      بہار     کا      نغمہ     کوئل     سنائی   ہے 
اُسکے   گلشن    میں    حُلیہ   سازوں   نے ہر     پتی 

سدا       شبنم        سے       ہی         رُلا ئی        ہے 
اُسے     جفا     کے    سمندر    میں    تیرتے     دیکھا 

وہی   تصویر   اِن     آنکھوں   میں   اب  سمائی  ہے
آخر   انسان   ہے   خطا   بھی   ہے   ممکن   اِس  سے 

اُسکا   دعویٰ   ہے   کہ   گنگا   میں   وہ   نہائی    ہے
فراق  کی  جہد  سے   تھکا،   جو  بامِ عشق   پہ ہوں 

میرے  لبوں   پہ  اب   شدت   سے    پیاس    آئی  ہے
اُسکی   اّنا    کا   سدباب   اب   بھی   ہو   کہ  نہ  ہو 

کلی   و   پُھول   تو   خزاں   کی    ہی   رسوائی  ہے 
چل   آبشارِ   مضافات   میں   اُسے   پِھر    ڈھونڈیں 

جو  تیرے   قفس   سے       مُقیّد   تتلی   اُڑائی   ہے 
نہ    چھیڑ   بہار   میں   بہاروں   کا   تال   اے   راہی

لگتی   دلسوز     اب    رِندوں   پہ   یہ   شہنائی   ہے

عبدالرحمن خان (راہی)

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں