87

سویڈن ناروے میں وہ جگہ جہاں کرونا وبا سے لوگوں کو زیادہ نقصان ہوا ہے

سویڈن کے شہر ستورم ستڈ میں دریا کے پل کے درمیان وہ جگہ ہے جہاں ناروے اور سویڈن کی بارڈر لائین ہے، یہاں بارڈر کے دونوں طرف لوگ بغیر کسی ملک کا فرق کئیے رہتے ہیں اور دونوں اطراف میں نوکریاں کاروبار اور شاپنگ کرنے جاتے ہیں لیکن کرونا وبا نے انکی زندگیاں ہی بدل کر رکھ دی ہیں۔ کرونا وبا شروع ہونے کے بعد ناروے نے اپنا بارڈر سیل کر دیا جس سے دونوں اطراف کے لوگ اپنے اپنے گھروں میں پھنس کر رہ گئے ہیں۔

ناروے نے نہ صرف اپنا بارڈر بند کیا ہے بلکہ یہ قانون بھی لاگو کیا ہے کہ جو بندہ ناروے میں داخل ہوگا وہ 14 دن کورنٹائین بھی کرے گا لہذا اب دونوں اطراف کے لوگ دور سے صرف ایک دوسرے کو دیکھ ہی سکتے ہیں ایک دوسرے کی طرف جا نہیں سکتے۔ لوگوں کی نوکریاں اور کاروبار بند ہوگئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں