54

شخصیت سازی کیا ہوتی ہے

آپ جب کوئی کمپیوٹر کوئی سیل فون خریدتے ہیں تو یہ کمپنی سیٹنگ کے ساتھ آتا ہے. آپ اسے چلا سکتے ہیں لیکن استعمال کیلئے آپ کو اس میں اپنی ضروریات کے پروگرام اور ڈیٹا ڈالنا ہوگا. اسے customize کرنا یعنی تحصیص کرنا کہتے ہیں. اپنی مرضی کی یہی سیٹنگ اسے آپ کے استعمال کے ساتھ بہترین جوڑ دیتی ہے.

شخصیت سازی بھی کچھ ایسی ہی ہے. البتہ ہم انسان کمپیوٹر یا سیل فون نہیں جن کی فیکٹری سیٹنگ ساری یکساں ہوں. مختلف ماحول مختلف گھروں اور تعلیمی پس منظر میں ہماری سیٹنگز جب ہمارے ہاتھ میں آتی ہیں یعنی بلوغت کے بعد جب ہم اپنی ذمہ داریاں خود اٹھاتے ہیں تو بہت کچھ ہمیں ڈالنے کے ساتھ بہت کچھ نکالنا بھی پڑ جاتا ہے.

لیکن انسانی دماغ بہرحال کام کمپیوٹر کی طرح ہی کرتا ہے. آپ اسے پروگرام کر سکتے ہیں. آپ اچھی عادات ڈال سکتے ہیں. بری عادات نکال سکتے ہیں. آپ پڑھ کر اس کی صلاحیت بڑھا سکتے ہیں. آپ اپنے وقت اپنے زمانے کے حساب سے ہر وقت اپ گریڈ کر سکتے ہیں. عام طور پر 35 سال کی عمر تک یہ بہت آسان ہوتا ہے. اس عمر کے بعد شخصیت سازی پیچیدہ ہوتی چلی جاتی ہے.

کچھ لوگ لیکن اپنے سسٹم کو اپنی مرضی کے مطابق بنانے کی بجائے دوسروں کو نتائج کا ذمہ دار بتانا یا سمجھنا شروع کر دیتے ہیں. ایسے لوگوں کی شخصیت پھر بگڑنے لگتی ہے. اگر آپ عاقل اور بالغ ہیں تو اپنی شخصیت سازی کے اب آپ خود ذمہ دار ہیں. آپ الزام یا بلیم کا وائرس سب سے پہلے اپنے سسٹم سے نکال دیں. ورنہ یہ آپ کو نہ بننے دے گا نہ چلنے دے گا.

ریاض علی خٹک

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں