111

کونسے عوامل مردوں میں پروسٹیٹ کینسر کا باعث بن سکتے ہیں۔

پروسٹیٹ سے متعلق مسائل بشمول بینائین پروسٹیٹک ہائپرپلاسیا (BPH)، پروسٹیٹائٹس، اور پروسٹیٹ کینسر، دنیا بھر کے مردوں میں عام صحت کے خدشات ہیں۔ بینائن پروسٹیٹک ہائپرپالسیا (بی پی ایچ) یا پروسٹیٹ کی توسیع عمر رسیدہ مردوں میں پروسٹیٹ سے متعلق سب سے زیادہ عام مسائل میں سے ایک ہے۔ ایک اندازے کے مطابق 60 سال کی عمر تک تقریباً 50% مردوں میں BPH ہو سکتا ہے۔ 85 سال کی عمر تک، یہ تقریباً 90 فیصد تک بڑھ جاتا ہے۔ پروسٹیٹائٹس، جس سے مراد پروسٹیٹ غدود کی سوزش ہوتی ہے، ہر عمر کے مردوں کو متاثر کر سکتی ہے۔ ایک اندازے کے مطابق تقریباً 10-15% مرد اپنی زندگی میں کسی نہ کسی وقت پروسٹیٹائٹس کی علامات کا تجربہ کرتے ہیں۔ پروسٹیٹ کینسر عالمی سطح پر مردوں میں سب سے زیادہ تشخیص شدہ کینسروں میں سے ایک ہے۔ ورلڈ کینسر ریسرچ فنڈ کے مطابق، 2020 میں دنیا بھر میں مردوں میں کینسر کے تمام نئے کیسز کا تقریباً 7.3 فیصد پروسٹیٹ کینسر تھا۔ جسکا مطلب ہے کہ تقریباً 8 میں سے 1 آدمی کو اپنی زندگی کے دوران پروسٹیٹ کینسر کی تشخیص ہوئی تھی۔

کئی عوامل اور حالات ممکنہ طور پر پروسٹیٹ کو نقصان پہنچا سکتے ہیں یا پروسٹیٹ کے مسائل میں حصہ ڈال سکتے ہیں۔ کچھ عام عوامل جو پروسٹیٹ پر منفی اثر ڈال سکتے ہیں ان میں مندرجہ ذیل شامل ہیں:

1)- عمر: مردوں کی عمر کے ساتھ انکے پروسٹیٹ غدود میں قدرتی طور پر تبدیلیاں آتی ہیں، جس سے پروسٹیٹ سے متعلق مسائل پیدا ہونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ پروسٹیٹ کی توسیع (BPH) اور پروسٹیٹ کینسر کا خطرہ عمر کے ساتھ بڑھتا ہے، خاص طور پر 50 سال کی عمر کے بعد مزید بڑھ جاتا ہے۔

2)- ہارمونل تبدیلیاں: ہارمونل عدم توازن، خاص طور پر ٹیسٹوسٹیرون کی سطح میں تبدیلی، پروسٹیٹ کی صحت کو متاثر کر سکتی ہے۔ ٹیسٹوسٹیرون ایک ہارمون ہے جو پروسٹیٹ غدود کے کام میں کردار ادا کرتا ہے، اور اس کی سطح میں تبدیلی پروسٹیٹ کے مسائل میں حصہ ڈال سکتی ہے۔

3)- خوراک: ایک غیر صحت بخش غذا، خاص طور پر سرخ گوشت اور سنترپت چکنائی والی غذا، پروسٹیٹ کے مسائل پیدا ہونے کے زیادہ خطرے سے منسلک ہو سکتی ہے۔ دوسری طرف، پھلوں، سبزیوں اور صحت مند چکنائیوں سے بھرپور غذا کا حفاظتی اثر ہو سکتا ہے۔

4)- خاندانی تاریخ: پروسٹیٹ کے مسائل یا پروسٹیٹ کینسر کی خاندانی تاریخ ہونے سے پروسٹیٹ کے مسائل پیدا ہونے کا خطرہ بڑھ سکتا ہے۔ اگر خاندان کے کسی قریبی رکن، جیسے کہ والد یا بھائی، کو پروسٹیٹ کا کینسر ہوا ہے، تو خاندان کے دیگر مرد افراد کے لیے خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔

5)- سست طرز زندگی: جسمانی سرگرمی کی کمی اور بیٹھے رہنے والے طرز زندگی کا تعلق پروسٹیٹ کے مسائل کے بڑھتے ہوئے خطرے سے ہوسکتا ہے۔ باقاعدگی سے ورزش پروسٹیٹ صحت سمیت مجموعی صحت کو فروغ دے سکتی ہے۔

تمباکو نوشی اور الکحل: تمباکو نوشی اور الکحل کا زیادہ استعمال پروسٹیٹ کی صحت پر منفی اثر ڈال سکتا ہے اور اس کا تعلق پروسٹیٹ کینسر کے بڑھتے ہوئے خطرے سے ہے۔

6)- جنسی طور پر منتقل ہونے والے انفیکشن (STIs): بعض جنسی طور پر منتقل ہونے والے انفیکشن پروسٹیٹائٹس کا سبب بن سکتے ہیں، جس سے پروسٹیٹ غدود میں سوزش اور ممکنہ نقصان ہو سکتا ہے۔

یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ طرز زندگی کا انتخاب جیسے کہ صحت مند غذا کو برقرار رکھنا، جسمانی طور پر متحرک رہنا، تمباکو نوشی سے پرہیز اور الکحل کا زیادہ استعمال پروسٹیٹ کی صحت کو مثبت طور پر متاثر کر سکتا ہے۔ پروسٹیٹ کے کسی بھی ممکنہ مسائل کا جلد پتہ لگانے اور ان کے انتظام کے لیے باقاعدہ پروسٹیٹ چیک اپ اور صحت کی دیکھ بھال کرنے والے پیشہ ور افراد سے مشاورت ضروری ہے۔

پروسٹیٹ کی صحت صحت عامہ کی ایک اہم تشویش بنی ہوئی ہے، اور دنیا بھر میں پروسٹیٹ سے متعلقہ حالات کو سمجھنے، روکنے اور علاج کرنے کے لیے جاری کوششیں اہم ہیں۔